Sahiwal Division Administration

کشمیر پر بھارتی قبضہ کیخلاف ساہیوال ڈویژن میں ریلیاں و سیمینار

ملک دلاور سلطان

کشمیر پر بھارتی قبضہ کیخلاف گورنمنٹ پوسٹ گریجوایٹ کالج فار بوائز ساہیوال میں ایک سیمینارمنعقدکیاگیا. جس کے خصوصی ڈائریکٹر کالجز پروفیسر مسعود فریدی اور مہمان اعزاز ڈپٹی ڈائریکٹر کالجز پروفیسر شباب فاطمہ تھیں –

تقریب میں طلبہ و طالبات کی طرف سے سعدیہ مغل، جویریہ عزیز‘ مبشرہ خلیل، عاصم اور مبشر نے اظہار خیال کیا. صدر شعبہ تاریخ پروفیسر عمران جعفر کمیاہ نے مسئلہ کشمیر کو تاریخی تناظر میں پیش کیا.

پرنسپل کالج پروفیسر ڈاکٹر ممتاز احمد نے اس بات پر زور دیا کہ کشمیر کے معاملات اسی وقت ٹھیک ہو سکتے جب ہم متحد ہونگے، آخر میں ڈائریکٹر کالجز پروفیسر مسعود فریدی نے اپنے خطاب میں کشمیریوں کے دکھ کو انسانیت کا دکھ قرار دیا اور کہا کہ اقوام عالم کو کشمیر کے دکھ کو سمجھنا چاہیے اور اسے حل کرنے کی کوشش کرنی چاہیے.

دوسری جانب حکومت پنجاب کے احکامات پر مقبوضہ کشمیر میں بھارتی ظلم اور بربریت کیخلاف یوم سیاہ کے طور منایا گیا اور دن کی مناسبت سے ضلعی انتظامیہ کے زیر اہتمام مذمتی سیمینارز اور ریلیوں کا انعقاد کیا گیا-

ضلعی انتظامیہ کے زیر اہتمام مرکزی ریلی میونسپل کارپوریشن سے لے کر جوگی چوک تک نکالی گئی، ریلی میں اے ڈی سی جی شیر افگن، اسسٹنٹ کمشنر سرمد حسین پی ٹی آئی عہدیداران، سرکاری افسران، سول سوسائٹی، میڈیا اور شہریوں کی بڑی تعداد بھی موجود تھی.

بازوؤں پر سیاہ پٹیاں باندھے شرکاء نے پاکستان اور کشمیر کے جھنڈے اٹھا رکھے تھے اور کشمیر بنے گا پاکستان، چھین کر لینگے آزادی کے فلک شگاف نعرے نعرے لگارہے تھے.

شرکاء نے مسئلہ کشمیر نمایاں انداز میں اجاگر کرنے پر وزیر اعظم عمران خان کی کوششوں کو سراہا، ڈپٹی کمشنر نے اس موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پوری پاکستانی قوم جدوجہد آزادی میں اپنے کشمیری بھائیوں کے ساتھ کھڑی ہے نہتے کشمیریوں پر غاصب بھارت کے مظالم کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے. انہوں نے کہا کہ وہ دن دور نہیں جب مقبوضہ کشمیر میں آزادی کا سورج طلوع ہوگا.

کمشنر ساہیوال ڈویژن علی بہادر قاضی نے کہا ہے کہ مظلوم کشمیریوں پر جاری بھارتی ظلم و ستم عالمی ضمیر کی بے حسی کی درد ناک مثال ہے جسے فوری روکا جانا چاہیے۔ دنیا میں انسانی حقوق کے علمداروں کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ کشمیر یوں کو ان کا بنیادی حق خودارادیت دلائیں جس کا ان سے وعدہ کیا گیا تھا۔

کشمیر پاکستان کے ساتھ تجارتی، ثقافتی، مذہبی اور معاشرتی رشتوں کے اٹوٹ بندھن میں بندھا ہوا ہے جسے دنیا کی کوئی طاقت جدا نہیں کر سکتی۔ انہوں نے یہ بات یوم سیاہ کشمیر کے حوالے سے ’کشمیر میں ظلم کی سیاہ رات اور عالمی ضمیر‘کے موضوع پر ہونے والے ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کہی جس کا اہتمام ساہیوال آرٹس کونسل نے بارانی انسٹی ٹیوٹ آف سائنسز کے تعاون سے کیا تھا۔

سیمینار میں ایڈیشنل کمشنر کوارڈینیشن شفیق احمد ڈوگر، بارانی یونیورسٹی راولپنڈی کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر قمر الزمان، ڈائریکٹر ساہیوال آرٹس کونسل ڈاکٹر سید ریاض ہمدانی اور بارانی انسٹی ٹیوٹ آف سائنسز کے سی ای او میاں ساجد کے علاوہ اساتذہ اور طلبہ کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی قوم اپنے مظلوم کشمیری بھائیوں کی جدوجہد میں ان کے شانہ بشانہ ساتھ ہے اور ان کی سیاسی و سفارتی اور اخلاقی حمایت جاری رکھی جائے گی۔

انہوں نے کہا کہ 27اکتوبر 1947کے سیاہ دن بھارتی فوجیوں نے کشمیر پر ناجائز قبضہ کیا اور ہندوستان کی تقسیم کے منصوبے کی صریحاً خلاف وزری کرتے ہوئے لاکھوں کشمیریوں کو غلام بنا لیا گیا۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ عالمی ضمیر کو جھنجوڑا جائے اور بھارت کو مجبور کیا جائے کہ وہ کشمیریوں کو ان کا آزادی کا حق دے۔

سیمینار کے موقع پر بھارتی ظلم و ستم پر مبنی تصویری نمائش بھی لگائی گئی اور حاضرین کو دستاویزی فلم بھی دیکھائی گئی۔ سیمینار کے اختتام پر ایک واک بھی کی گئی جس کی قیادت کمشنر ساہیوال ڈویژن علی بہادر اقاضی نے کی۔ شرکاء نے بینرزاور پلے کارڈز اٹھارکھے تھے جن پر بھارتی ظلم وستم کے خلاف نعرے درج تھے۔

About Arshad

Arshad
ارشد فاروق بٹ کالم نگار اور بلاگر ہیں، چیچہ وطنی نیوز پر آپ اردو ادب اور کالمز کی کیٹیگریز اپڈیٹ کرتے ہیں۔